ادارہ بتول

پون صدی کی درخشندہ روایت

ادارہ بتول

پون صدی کی درخشندہ روایت

پٹھو گرما گرم(نظم) – نور مارچ ۲۰۲۱

پٹھو گرما گرم

کھیلیں گے آج ہم تو پٹھو گرما گرم
بنیں گی اب دو ٹولیاں کوئی نہیں ہے کم
کھیلیں گے آج ہم تو پٹھو گرما گرم

کھیلنے کو ہیں تیار میری ساری ہی سکھیاں
گیند پکڑی ہاتھوں میں بِٹوں پہ جمی اکھیاں

بے ایمانی ہو گی نہیں کسی سے ہضم
کھیلیں گے آج ہم تو پٹھو گرما گرم

تاک کے ماری گیند پٹھو ڈھا دیا نسرین نے
دوڑ کے ، دیکھو ، جوڑا اس کو ہشیار پروین نے

بنا نہ پٹھو گر تو باری ہو جائے گی ختم
کھیلیں گے آج ہم پٹھو گرما گرم

عائشہ کی کمر میں گیند تاک کے ماری کس نے ؟
پٹھو کو لگنے سے پہلے پورا کردیا اُس نے

سب نے مِل کے شور مچایا ،پٹھو گرما گرم
کھیلیں گے آج ہم تو پٹھو گرما گرم

بہت مزہ ہے بچو ! ایسی کھیل میں سنو!
صحت بنانے کو تم ایسے کھیل ہی چُنو

آئو مل کے آج ایک ہو جائیں ہم تم
کھیلیں گے آج ہم تو پٹھو گرما گرم

کھیل کے وقت کھیلیں گے اور باقی وقت پڑھائی
آنچ نہ آئے وطن پر گر دشمن کرے چڑھائی

جیت کے ہم تو کردیں گے سب ، عُدو کا سرخم
کھیلیں گے آج ہم تو پٹھو گرما گرم

شاہدہ سحر

* * *

:شیئر کریں

Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on linkedin
5 1 vote
Article Rating
Subscribe
Notify of
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
Would love your thoughts, please comment.x
()
x